قرآن کریم کی سب سے بڑی تفسیر کا تعارف

اللہ کے فضل و کرم سے  ہم قرآن کریم کے گہرے مطالعے کا آغاز کر رہے ہیں ،اس مطالعے میں ہم قرآن کریم کو سمجھنے کی بھرپور کوشش  کریں گے اورہم اپنا حاصلِ مطالعہ  بھی آپ سے شیئر کرتے رہیں گے۔اس کے ساتھ ساتھ  دوران مطالعہ اپنی ذہنی ،علمی ، قلبی کیفیات اور احساسات کو بھی  الفاظ کے قالب میں آپ تک پہنچانے کی کوشش کریں گے تا کہ قرآن کریم کے الفاظ کے معانی آپ تک پہنچا سکیں۔اس کے ساتھ ساتھ ہماری یہ کوشش بھی ہوگی کہ ہم آپ کو قدیم اور جدید مفسرین کی تفسیری کاوشوں  سے بھی آگاہ کر سکیں۔

 

یہاں دینی طلباء کے ذوق کا بھی خوب خیال رکھا جائے گا،ہم انہیں درس نظامی کے علوم و فنون کے اجراء اور مشق کی بھی بھرپور کوشش کریں گے۔فی الحال ہم نے اپنے  اس  مطالعے میں خود پر کوئی پابندی نہیں لگائی کہ ہم فقط اِ س اِس  زاویے سے قرآن کریم کا مطالعہ کریں گے  البتہ کچھ پہلو ہمارے ذہن میں ہیں لیکن ہم انہیں پر اکتفاء نہیں کریں گےبلکہ  دوران مطالعہ جو جو نئے  پہلو سامنے آتے جائیں گے ،انہیں بھی اپنے مطالعے کا حصہ بناتے جائیں گے ۔ہم اس مطالعے میں طوالت کا بالکل بھی خیال نہیں کریں گے بلکہ بعض اوقات ہم زیادہ معلومات فراہم کرنے اور آسان بنانے کیلئے خود بھی اجمال سے تفصیل اور توضیح کی طرف  جائیں گے ۔

 

اس مطالعے میں ہمیں طوالت کا کوئی خوف بھی نہیں ہے کیونکہ اس مطالعے کوفی الحال  کتابی شکل میں چھاپنے کا ہمارا کوئی ارادہ نہیں ہے،یہ مطالعہ قرآن تو ہم اپنے شوق کی وجہ سے کر رہے ہیں اور اپنے مسلمان بہن بھائیوں کی خیرخواہی کی وجہ سے اسے انٹرنیٹ پر شیئر کر رہے ہیں ۔ اس مطالعے میں ہمارا طریقہ کاریہ  ہوگا کہ ہم ایک آیت یا ایک سے زیادہ آیات کا مختلف تفاسیر سے مطالعہ کریں گے ۔اگر ضرورت پڑی تو مختلف فنون کی اہم کتب سے بھی استفادہ کریں گے ،اس کو ساتھ ساتھ ا ٓسان زبان میں آپ کیلئے لکھتے بھی جائیں گے ۔

یہ بالترتیب ہم اپنی ویب سائٹ پر  بھی اپ لوڈ کرتے چلے جائیں گے ،اگر ممکن ہوا تو ان کو وڈیو اسباق کی صورت میں پڑھا بھی دیں گے۔دعا کریں اللہ کریم ہمیں اس عظیم اور مقدس کام کی تکمیل کی توفیق عطا فرمائے ،ہم اس مقدس کا آغاز چھبیس دسمبر دو ہزار بیس 26-12-2020 سے کر رہے ہیں ۔

 

بسم اللہ الرحمن الرحیم والحمد للہ رب العالمین والصلوۃ والسلام علی سید الانبیاء والمرسلین وعلی آلہ و اصحابہ اجمعین

اما بعد !

ہم  نے جان بوجھ کر آسان  اور مشہور و معروف عربی خطبہ لکھا ہے،ہم چاہتے تو یہاں طویل عربی  خطبہ لکھ سکتے تھے لیکن ہم نے بوجوہ نہیں لکھا  کیونکہ ہم اپنا زیادہ وقت مطالعہ قرآن کو دینا چاہتے ہیں ۔ہمارا جی تو چاہتا  تھا کہ ہم علوم القرآن کے حوالے سے ایک تفصیلی مقدمہ پہلے لکھیں ،پھر اپنے مطالعہ قرآن کا آغاز کریں لیکن ہم فقط اس لیے آغاز میں وہ مقدمہ نہیں لکھ رہے کہ کئی ایسا نہ ہو کہ ہم اس  مقدمے کو علمی  بنانے کے چکر میں اس تفسیر سے محروم نہ رہ جائیں ،اس لیےبراہ راست فوری طور پر ہی  اپنے مطالعہ قرآن کا آغاز کر رہے ہیں۔اگر اللہ نے چاہا تو ہم اس تفسیر  کو مکمل کرنے کے بعد ایک مبسوط مقدمہ بھی لکھیں گئے ۔ہم نے اپنے اس قرآن کریم کے مطالعہ  کا نام رکھا ہے ۔

مطالعۃ الاحسان فی تفسیر القرآن

 

ہم نے جب اس کام کا آغاز کرنے کا سوچا تو جی چاہا کہ ہم تیسویں پارے کی آخر ی سورتوں سے آغاز کرنا چاہیے کیونکہ وہ سورتیں مختصر ہیں ،وہ جلد ہی مکمل ہوتی چلی جائیں گی اور ہمیں مزید کام کرنے کا حوصلہ ملتا رہے گا  لیکن پھر ہم نے چند وجوہات کی بنا پر اس ارادے کو ترک کر دیا ۔پہلی وجہ یہ تھی کہ قرآن کریم جس ترتیب میں موجود ہے ،اس کے خلاف تفسیر کرنا مناسب نہیں ہے کیونکہ اس طرح ہم اس کی ترتیب کے اسرار کو نہیں سمجھ سکیں گے۔دوسری وجہ یہ تھی کہ ہم اپنی تفسیر میں پہلی بار کسی چیز کے متعلق پوری تفصیل ذکر کرنے کی کوشش کریں گے جبکہ دوسری یا تیسری مرتبہ صرف اشارہ کرتے ہوئے چلے جائیں گے ۔ہمیں معلوم ہے ،ہم جو کام کرنے جا رہے ہیں ،وہ انتہائی مشکل اور پیچیدہ ہے ،اس کو پورا کرنے کیلئے جتنا وقت چاہیے وہ بھی ہمارے پاس نہیں ہے ،جتنی صلاحیتیں درکار ہیں وہ بھی ہمارے پاس نہیں ہیں لیکن ہم اللہ کی رحمت پر امیدیں لگا کر اس میدان میں اتر رہے ہیں ،خدا گواہ ہے اس سے ہمارا مقصد فقط اتنا ہے کہ جو لوگ قرآن سمجھنا چاہتے ہیں ،ان تک ہم اللہ کے کلام کا فہم پہنچا سکیں ۔

 

 بخدا ہمیں اس بات کا بھی بخوبی احساس ہے کہ ہم سے اس میدان میں بہت سی غلطیاں بھی ہوں گئی  لیکن اللہ کا شکر ہے کہ ہمارے ملک میں کثیر تعداد میں ایسے علماء کرام موجود ہیں جو چند دنوں میں ہماری تمام غلطیوں کی نشاندہی کر دیں گے ،میری آپ سے گزارش ہے کہ جتنا کچھ میں آپ تک صحیح صحیح  پہنچا دوں اسے رحمت الہی سمجھ کر قبول فرما لیں اور جو میری غلط فہمیاں ہیں ،وہ ان شاء اللہ علمائےکرام کے ذریعے آپ تک پہنچتی رہیں گی ۔

 

اب ہم باقاعدہ اپنے مطالعہ قرآن یا تفسیر قرآن کا آغاز کر رہے ہیں ۔ہم سب سے پہلے بسم اللہ الرحمن الرحیم کی تفسیر سمجھنے کی کوشش کریں گے

 

تمام اقساط یہاں ملاحظہ فرمائیں 

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر ایک 

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر دو 

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر تین

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر چار

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر پانچ 

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر چھ

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر سات

بسم اللہ کی تفسیر قسط نمبر آٹھ

بقیہ جلد ان شاء اللہ