سوال:

الکامل فی التاریخ کا اسلوب کیا ہے ؟

جواب :

الکامل فی التاریخ علامہ ابن اثیر جزری کی تصنیف ہے،یہ اسلامی تاریخ پر شاندار کتاب ہے،اس میں علامہ ابن اثیر نے ابتداء کائنات سے چھ سو تیس ہجری تک کے واقعات کو تسلسل کے ساتھ بیان کیا ہے،انہوں نے اپنی تاریخ کی ابتداء تاریخ طبری سے کی تھی لیکن انہوں نے صرف طبری پر ہی اکتفاء نہیں کیا بلکہ ان  کے پیش نظر دیگر تاریخ کی کتب بھی تھی ،یہی وجہ ہے کہ تاریخ طبری پر بھی بعض جگہ انہوں نے اضافے کیے ہیں ،ان کا طریقہ کار بھی علامہ طبری سے مختلف ہے،علامہ طبری ایک ہی مقام پر مختلف روایات ذکر کر دیتے ہیں جبکہ علامہ ابن اثیر بالترتیب اس واقعے کو تسلسل اور روانی کے ساتھ بیان کر دیتے ہیں ، یہ ایک کامل اسلامی تاریخ ہے، اس میں کائنات کے ابتدائی حالات  بھی  ہیں ،انبیاء سابقین کا تذکر ہ بھی ہے،حضرت محمد ﷺ ،خلفاء راشدین اور دیگر صحابہ کرام کی سیرت بھی ہے ،خلفاء بنو امیہ اور خلفاء بنو عباس کا تذکرہ بھی ہے،اس میں فرنگیوں ،مغلوں،ایوبیوں ،صلیبیوں اور تاتاریوں کا تذکرہ بھی ہے ۔الکامل فی التاریخ کے حوالے سے علامہ ابن حجر لکھتے ہیں ،ابن اثیر جزری بعض اوقات تاریخی واقعات کا ایسا نقشہ کھینچتےہیں جیسے ان واقعات کے وقت وہ خود وہاں موجود تھےاور سب کچھ دیکھ کر بیان کر رہے ہوں۔

3 thoughts on “الکامل فی التاریخ کا اسلوب کیسا ہے؟

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے